نئی دہلی: بھارت میں مودی سرکار کی کسان دشمن پالیسیوں کے خلاف کسانوں کاعزم ابھی بھی پہاڑ کی مانند اپنی جگہ پر موجود ہے جس کے نتیجے میں ہریانہ، پنجاب اور دلی میں کسانوں کے دھرنے  تا حآل جاری ہیں۔ دوسری جانب یہ اطلاعات بھی سامنے آ رہی ہیں کہ 26 جنوری کے بڑے مظاہرے کے لیے تیاریاں بھی جاری ہیں۔ یاد رہے کہ 26 جنوری بھارت کا یوم جمہوریت ہے اور ہر سال اس دن بھارت اپنی طاقت کا مظاہرہ کرتا ہے۔ ضلع گرداسپور کے کئی علاقوں میں کاشکاروں نے ٹریکٹر ریلیاں نکالیں جن میں نوجوانوں، خواتین اور بچوں نے بھی شرکت کی۔

دلی کے دھرنے میں بارشوں اور سخت سردی کے باوجود کسان مودی کے خلاف ڈٹے ہوئے ہیں، مظاہرین کا کہنا ہے وہ کالے قوانین کو رد کروا کر ہی دم لیں گے۔نوجوان سوشل میڈیا پر مہم چلا کر مظاہرین کے لیے سامان جمع کر رہے ہیں، کانگریس نے متنازع قوانین واپس نہ لینے پر مودی سے استعفیٰ کا مطالبہ کر دیا۔

سو سے زائد برطانوی ارکان پارلیمنٹ نے وزیراعظم بورس جانسن کو خط لکھا جس میں مودی سرکار کے مظاہرین کے ساتھ ناروا سلوک پر تشویش کا اظہا کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔

About the author

Avatar

Webdesk

Leave a Comment