اسلام آباد: وزیر توانائی کی جانب سے دی گئی ابتدائی رپورٹ کے مطابق 9 جنوری کی رات کو ملک میں بدترین بلیک آؤٹ فنی خرابی کی وجہ سے نہیں ہوا بلکہ یہ بدترین بلیک آؤٹ انسانی غلطی کا شاخسانہ تھا۔

بلیک آؤٹ کی بنیادی وجہ گڈو پاور پلانٹ کے سوئچ یارڈ میں لگے ایک بریکر نکلا جس کی مینٹیننس جاری تھی کہ دن کو کام کرنے والا عملہ سرکٹ بریکر کو بند کیے بغیر چلا گیا۔ رات کی شفٹ میں عملے نے سرکٹ بریکرکی ارتھنگ ختم کیے بغیر اسے بند کیا جس کی وجہ سے گڈو پاور پلانٹ اور اس سے نکلنے والی ٹرانسمیشن لائنز بھی بند ہو گئیں ساتھ ہی پورے نظام میں فریکونسی میں تعطل آنا شروع ہو گیا۔

دوسری جانب  پاور جنریشن کمپنی نے کارروائی کرتے ہوئے گڈو تھرمل پاور اسٹیشن کے 7 ملازمین معطل کردیے۔

About the author

Avatar

Webdesk

Leave a Comment