اسلام آباد: مقامی انسداد دہشتگردی کی عدالت میں اسامہ ستی قتل کیس کی سماعت ہوئی جس کے دوران زیر حراست پولیس اہلکاروں کو ان کا جسمانی ریمانڈ ختم ہونے کے بعد عدالت کے سامنے  پیش کیا گیا۔

انسداد دہشتگردی عدالت کے جج راجہ جواد عباس نےسماعت کے آغاز پر  تفتیش افسر سے  کیس میں ہونےوالی پیش رفت کے بارے میں پوچھا تو تفتیشی افسر نے عدالت کو بتایا کہ ملزمان اعتراف جرم کر چکے ہیں کہ ان کے ہاتھوں بے گناہ شہری کی جان گئی۔

عدالت نے استفسار کیا کہ کیا آپ نے ملزمان کا بیان قلمبند کر لیا ہے اس پر تفتیشی افسر نے بتایا کہ تاحال ملزمان کا مجسٹریٹ کے سامنے بیان قلمبند نہیں ہوسکا، جے آئی ٹی کی تفتیش مکمل کرنے کے لیے مزید جسمانی ریمانڈ چاہیے لہٰذا ملزمان کے جسمانی ریمانڈ میں پانچ روز کی توسیع دی جائے، ملزمان کا 364 کا اعترافی بیان بھی لیا جائے گا جس پر عدالت نے ملزمان کے جسمانی ریمانڈ میں 5 روز کی توسیع کرتے ہوئےانہیں 18 جنوری کو عدالت کے سامنے دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیا۔

About the author

Avatar

Webdesk

Leave a Comment